Urdu Alphabets – حروفِ تہجی

 حروفِ تہجی کی تعریف و تو ضیع

 اردو زبان حروفِ تہجی پر مشتعمل زبان ہے۔تہجی سے مراد ہجے کرنا۔ الفاظ کے زیر۔زبر کو الگ الگ ادا کرنا۔ حروفِ تہجی مفرد حروف اور انکی مقررہ ترتیب کرنے کا نام ہے۔کیونکہ اردو حروفِ تہجی مختلف زبانوں سے مشتق ہے ۔جن میں عربی۔ فارسی۔ ایرانی ۔ہندی زبانیں شامل ہیں۔اردو حروفِ تہجی کی درست تعداد پر ابھی تک کوئی متفقہ فیصلہ نہیں کیا گیا۔ کیونکہ مختلف ناقدین نے اپنی تحقیق سے انکی تعداد بھی مختلف ہی بتائی ہے۔ شان الحق حقی نے تعداد 52 بتائی ہے جبکہ شمس الرحمان فاروقی کے مطابق 37 درست تعداد ہے۔

Urdu Alphabets

اردو حروفِ تہجی مختلف زبانوں سے مشتق ہے ۔جن میں عربی۔ فارسی۔ ایرانی ۔ہندی زبانیں شامل ہیں۔اردو حروفِ تہجی کی درست تعدار کا تعین ابھی نہیں ہوا

 

اس میں الف۔ ب۔ت۔ ث۔ ج۔ چ۔ ح۔ د۔ ذ۔ ر۔ ز۔س۔ش۔ ص۔ ض۔ ط۔ ظ۔ ع۔ غ۔ ف۔ ک۔ل۔م۔ ن۔و۔ہ۔ء۔ی عربی حروف ہیں۔ ان حروف کا تعلق عربی زبان سے ہے۔جبکہ ٹ۔ڈ۔ڑ۔ ہندی کی وساطت سے اردو میں آئے اور ژ فارسی زبان سے اردو میں شامل ہوا۔ اسی طرح ق اور گ ترکی زبان کے اثر سے اردو زبان میں داخل ہوئے۔ اردو زبان میں دو چشمی ھ ہندی زبان کی مرہونِ منت ہے۔جو دیگر حروف کی اضافت میں استعمال ہوتی ہے دو چشمی ھ کے ساتھ اردو حروفِ تہجی کی تعداد ملاحظہ فرمائیں

ا     آ     ب     بھ      پ       بھ       ت       تھ      ٹ     ٹھ

ث       ج        جھ       چ      چھ         ح       خ       د     دھ

ڈ        ڈھ        ذ         ر       رھ         ڑ         ڑھ    ز     زھ

ژ     ژھ       س      ش      ص       ض      ط      ظ     ع      غ

ف      ق      ک      کھ      گ       گھ       ل      لھ      م       ن

و      وھ        ہ      ء        ی        ے

اردو زبان میں دو چشمی ھ ہندی سے آئی ہے۔ اسکو ہائے ملخوط بھی کہتے ہیں ۔رشید حسن خان اس بارے یوں رقم طراز ہیں

ہائے ملخوط مستقل حرف کی حیثیت نہیں رکھتی یہ کسی حرف کے

ترکیبی جز کے طور پر شامل ِ حرف ہوتی ہے۔اس ملخوط حرف کو

آپ مفرد حرف مانیں یا مرکب آواز سے تعبیر کریں ؛ ہاے ملخوط کی

آواز اس حرف کی آواز کا جز اور بھاری پیوند ہوتی ہے۔ جیسے گھر ۔

ادھار۔راکھ وغیرہ

ترکیبِ حروف

اس سے مراد ایک حرف کا دوسرے حرف سے ملنے کی صورت ہے۔ عام طور سے اسکی تین صورتیں ہیں؛

ا۔ترکیبِ سابق       ب۔ ترکیبِ لاحق       ج۔ ترکیبِ طرفین

ترکیبِ سابق سے مراد حرف کا اپنے سے پہلے والے حرف سے ملنا ہے جیسے با میں الف کا ب سے ملنا۔ ترکیبِ لاحق کا مفہوم ہے کہ حرف کا اپنے سے بعد والے حرف سے ملنا جیسے رنج میں ج کا ع اور ب سے ملنا اور ترکیبِ طرفین سے مراد یہ ہے کہ حروف کا اپنے دونوں اطراف سے یعنی اپنے سے پہلے والے اور بعد والے حرف سے ملنا جیسے عجب میں ج کا ع اور ب سے ملنا وغیرہ۔

Copyright © 2016 - 2018 Explainry.com | All Rights Reserved